تازہ ترین
Home / Breaking News / نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزا ملتوی

نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزا ملتوی

اسلام آباد ہائیکورٹ نے نواز شریف، مریم نواز اور کیپٹن صفدر کی سزا معطلی کی درخواستوں پر سماعت پندرہ اگست تک ملتوی کرتے ہوئے وکلاء کو ہدایت کی کہ سولہ اگست تک دلائل ہر صورت مکمل کریں۔ جسٹس اطہرمن اللہ نے ریمارکس دیئے کہ کیا نیب نے سیکشن نائن اے فور میں ملزمان کی بریت کو چیلنج نہ کرکے تسلیم کرلیا کہ لندن فلیٹس کرپشن یا بدنیتی سے نہیں خریدے گئے۔

اسلام آباد ہائیکورٹ میں نواز شریف، مریم نواز اورکیپٹن ریٹائرڈ صفدر کی درخواست ضمانت پر سماعت جسٹس میاں گل حسن اورنگزیب اور جسٹس اطہر من اللہ پر مشتمل ڈویژن بینچ نے کی،،، بینچ کے نیب پراسیکیوٹر سے سوالات ،،، ٹرسٹ ڈیڈ سے معاونت کیسے ثابت ہوتی ہے؟ کیا زیر کفالت ہونا یا بے نامی ہونا بھی جرم ہے ؟ جسٹس اطہر من اللہ کا نیب پراسیکیوٹر سے استفسار
دورکنی بینچ نے سماعت سے قبل تمام فریقین سے پوچھا کہ کیا آپ کو عدالت پر اعتماد ہے؟ نیب پراسیکیوٹر، نواز شریف ، مریم اور صفدر کے وکلاء نے جواب دیا مکمل اعتماد ہے۔ خواجہ حارث نے کہا کہ نیب نے معلوم ذرائع آمدن اور اثاثوں کی مالیت کا پتہ لگائے بغیر اثاثوں کو آمدن سے زائد قرار دیا۔ نیب نے کرپشن کا کوئی ثبوت پیش نہیں کیا۔
جسٹس اطہر من اللہ نے نیب پراسیکیوٹر سے استفسار کیا کہ کیا 1993 میں ایون فیلڈ اپارٹمنٹس کتنے میں خریدے گئے؟ جس پر سردار مظفرنے کہا ان کو معلوم نہیں مگر پھر بھی ہم کہہ سکتے ہیں جائیداد کرپشن س بنائی گئی۔ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ ہم نے دستاویزات سے ثابت کردیا کہ مریم نواز نیلسن اور نیسکول کی بینیفشل مالک ہیں۔ جسٹس اطہر من اللہ نے ریمارکس دیے کہ نیب کے پاس کیلیبری فونٹ کے علاوہ کوئی ثبوت ہے تو پیش کرے۔ ٹرائل کورٹ نے نواز شریف کے مالک ہونے کا کہا ہے مریم نواز کا نہیں ؟ نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ مریم نواز کے بینفشل مالک ہونے اور جائیداد چھپانے کے دستاویزی ثبوت بھی عدالت میں پیش کردیے۔عدالت نے کیس کی سماعت 15 اگست تک ملتوی کردی۔
Facebook Comments

About admin

Check Also

خان صاحب! عوام کو میڈیا نہیں 100 دن کی حکمت عملی کا انتظار ہے، مریم اورنگزیب

 ترجمان مسلم لیگ (ن) مریم اورنگزیب نے کہا ہے کہ عمران خان صاحب! عوام کو میڈیا …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *